سی ایس ایس میں کون سی زبان اہم مسئلہ بن گئی؟

مقابلے کا امتحان (سی ایس ایس) دینے والے امیدوارجہاد اوردہشت گردی میں فرق واضح کرنے سے قاصر رہے ، سی ایس ایس کے 99 فیصد امیدوار قرآن وحدیث کے حوالے دینے میں کمزور ہوتے ہیں،سرکاری طور پر اعتراف کرلیا گیا کہ سی ایس ایس امتحان دینے والوں کا سب سے بڑا مسئلہ انگلش زبان بن گئی ہے، رپورٹ میں اسلامیات کے پرچے میں بھی امیدوراوں کی کارکردگی غیرتسلی بخش قراردے دی گئی ۔اس خبر رساں ادارے کو فیڈرل پبلک سروس کمیشن آف پاکستان کی حالیہ جاری رپورٹ کی دستیاب دستاویزات کے مطابق سی ایس ایس امتحان میں امیدوارواں کے لیے سب سے بڑا مسئلہ انگلش زبان کاہے۔یہ رپورٹ مقابلے کے امتحان میں اکثریتی امیدوارں کی ناکامی پر جاری کی گئی ہے۔ سی ایس ایس امتحان کے لازمی مضامین میں کسی اہم موضوع پر مضمون لکھنا،انگلش میں مہارت،حالات حاضرہ اور اسلا میا ت شامل ہیں۔90فی صد سے زائد امیدواروں کی ناکامی کے بعد پاکستان میں پہلی بار سی ایس ایس پرچوں (پیپرز)کاتجزیہ کیا گیا جس سے معلوم ہوا ہے کہ سی ایس ایس امتحان دینے والے اکثر امیدوروں کی انگلش خاص کر گرائمربہت کمزور ہوتی ہے جس کی وجہ سے وہ سوالوں کے مناسب جواب نہیں دے پاتے ہیں ،اکثرامیدورار مضمون لکھنے کی صلاحیت نہیں رکھتے ہیں اور نہ ہی وہ مضموںمیں کسی موضوع ہرکسی قسم کا تجزیہ کرپاتے ہیں 

جبکہ حالات حاظرہ پر اکثر امیدواروں کی کاکردگی تسلی بخش بتائی گئی ہے ۔پرچوں کے تجزیے سے معلوم ہوا ہے کہ سی ایس ایس امتحان دینے والوںامیدواروں کی سب سے کمزور حالت اسلامیات کی ہے جہاں پر امیدوار روز مرہ کے موضوعات پر بھی اپنے نقطہ نظر کوبیان کرنہیں پاتے ہیں ۔اختیاری مضمون،، اسلامک ہسٹری اینڈ کلچر1،، میں امیدواروں کی کارکردگی اچھی نہیں ہے ۔چند ہی طلباء نے اچھے نمبر لیے اکثر طالبعلم اپنی بات کو انگلش میں بیان کرنے سے بھی قاصر تھے ۔اکثر طالبعلم مغربی ایشیاء کی اصطلاح سے بھی لاعلم نکلے اسی طرح سپین میں مسلمانوں کی تہذیب سے بھی ناواقف تھے۔ سب سے اہم امر یہ ہے کہ مقابلے کے امتحان کے امیدواروں کی اکثریت قرآن کی تعلیمات کی روشنی میں جہاد اور دہشتگردی کے درمیان فرق کرنے سے قاصر رہی تھی 99فیصد امیدوار قرآن وحدیث کے حوالے دینے میں کمزور تھے ۔ اسی طرح اسلامک ہسٹری اینڈ کلچر ٹو کے پیپر میں طلباء کی کارکردگی مایوس کن رہی اور انہوں نے مضمون کو سمجھا تک نہیں۔