سی ایس ایس 2018 کے نتائج کیا رہے؟

فیڈرل پبلک سروس کمیشن نے سینٹرل سپیرئیر سروسز (سی ایس ایس)2018 ءکے نتائج کا اعلان کردیا، جس کے مطابق کامیابی کی شرح 4.79 فیصد رہی۔فیڈرل پبلک سروس کمیشن کی جانب سے جاری کردہ نتائج کے مطابق سی ایس ایس 2018ءکے امتحانات میں 11887 امیدواروں نے حصہ لیا جن میں سے صرف 569 امیدوار کامیاب ہوئے۔
فیڈرل پبلک سروس کمیشن(FPSC) سے جاری نتائج اور کامیاب ہونے والے امیدواروں کی شرح 4.79 فیصد ہے‘جو قابلِ تشویش تو ہے مگر گزشتہ برس کے مقابلے میں کچھ بہتر ضرور ہے۔یاد رہے کہ سی ایس ایس میں کامیاب ہونے والے امیدواروں کو سرکاری اداروں میں براہ راست گزیٹڈ آفسر تعینات کیا جاتا ہے جو بیوروکریسی کے ساتھ مل کر کام کرتا ہے۔سال 2016ءمیں 12 ہزار 176 امیدواروں نے سی ایس ایس کا امتحان دیا تھا جن میں سے صرف 379 امیدوار کامیاب قرار پائے تھے جبکہ سال2017ءمیں 9301 امیدواروں نے حصہ لیا جن میں سے صرف 312 امیدوار کامیاب ہوئے تھے اور رواں سال 24ہزار 10امیدواروں میں سے 569امیدوار تحریری امتحان میں پاس ہوسکے،اس طرح کامیابی کی شرح 4.79 فیصد رہی۔
ایف پی ایس سی کے ڈائریکٹر محمد علی کی جانب سے جاری نوٹیفکیشن کے مطابق سی ایس ایس امتحان2018میں مجموعی طور پر 24ہزار 10امیدواروں نے اپلائی کیا جن میں سے 11ہزار 887امیدوار امتحان کے عمل میں شامل ہوئے جن میں سے صرف 569امیدوار کامیاب ہوسکے۔ایف پی ایس سی کے مطابق جو امیدوار ناکام ہوئے ہیں وہ اپنے نتائج www.fpsc.gov.pkپر دیکھ سکتے ہیں۔ تحریری امتحان میں کامیاب قرار پانے والے امیدواروں کو مرحلہ وار میڈیکل امتحان ،نفسیاتی ٹیسٹ ،وائیوا کے شیڈول سے آگاہ کیا جائے گا۔
واضح رہے کہ لاہور ہائی کورٹ نے گزشتہ برس فیڈرل پبلک سروس کمیشن کو اردو میں پرچہ لینے کی ہدایت کی تھی، عدالتی حکم میں کہا گیا تھا کہ اردو پاکستان کی سرکاری زبان ہے اور سپریم کورٹ نے اس کو نافذ کرنے کے احکامات جاری کیے ہیں۔