کیسے پڑھیں؟ - نوید اسلم ملک

کیسے پڑھیں؟ - نوید اسلم ملک
وہ گفتگو کرتے ہوئے خاموش ہوئے تو میں گویا ہوا،لوگ سوال کرتے ہیں کہ کیسے لکھیں،لیکن میرا سوال ہے کہ کیسے پڑھیں؟ انہوں نے کہا کہ اپنی دلچسپی والی کتابوں کو پہلے پڑھا جائے۔جو کتابیں آپ کو اچھی لگتی ہیں،ان سے شروع کریں تاکہ آپ کو بوریت نہ ہو۔
دوسرا جو بھی کتاب آپ نے پڑھنی ہے،وہ خود آپ کو پڑھائے گی اگر وہ اچھی لکھی ہوئی ہے لہذا آپ کو ذبردستی پڑھنے کی ضرورت نہیں ہے۔ہوتا ہے کہ آپ نے کسی کتاب کے بارے میں سنا ہو کہ یہ بہت ہی شاندار و شاہکار کتاب ہے ہوسکتا ہے وہ آپ کو اچھی نہ لگے۔لیکن اگر بہت بڑی کوئی کتاب ہے جس کو دنیا میں لوگ مانتے ہیں،مثال کے طور پہ جیسے دوستوفسکی کا ناول ہے،ظاہر ہے آ پ اس کو ایسے ہی تو ریجیکٹ نہیں کریں گے،اس کے کم از کم سو ڈیڑھ سو صفحے یا کوئی ایک آدھ ناول تو پورا پڑھیں،اس کے بعد آپ اپنی کوئی بھی رائے قائم کریں۔یہ ان کتابوں کے بارے میں ہے جن کو دنیا نے مانا ہوا ہے کہ یہ اچھی کتابیں ہیں۔اس کے علاوہ آپ کو جو بھی کتاب اچھی لگتی ہے ضرور پڑھیں۔پہلی دفعہ مجھے یاد ہے کہ میں کسی کے گھر گیا اور وہاں ٹیبل پر ابنِ صفی کا ناول پڑا ہوا تھا،میں نے اس کا پہلا صفحہ پڑھا اور اس کے بعد مجھے پتا ہی نہیں کہ چلا کہ میں نے ایک گھنٹے میں اسے مکمل پڑھ لیا۔حالانکہ وہ ناول ابنِ صفی کی سیریز کا تیسرایاچوتھا حصہ تھا۔یعنی وہ شروع سے نہیں تھا لیکن اس کے باوجود وہ اتنا دلچسپ تھا۔ایک اور طریقہ یہ ہے کہ آپ نے اس میں سے جہاں سے اہم لگیں وہاں ہائی لائٹر یا پنسل وغیرہ سے نشان لگا لیں، اسٹارز بنا لیں تاکہ جب کبھی دوبارہ کتاب پڑھیں تومکمل کتاب نہ بھی اگر پڑھی جا سکے تو وہ اہم نکات دیکھ کر مختصر وقت میں ساری کتاب ری وائز ہو سکے۔ایک بات اور جس کو پڑھ کر میں خود بڑاحیران ہوا تھا،ڈیل کارنیگی نے لکھا تھا کہ خود اس نے جو کتاب پڑھی تھی دو سال بعد خود اسے وہ دوبارہ پڑھنی پڑ گئی تھی کیونکہ وہ اسے بھول چکا تھا۔لہذا یہ ٹینشن نہ لیں کہ میں جو کتاب پڑھتا ہوں مجھے یاد نہیں رہتا۔بار بار پڑھنے کی ضرورت آپ کو ہمیشہ پڑتی رہتی ہے۔پھر ایک اور بات ہے کہ ہو سکتا ہے کتاب کے کچھ صفحے اچھے نہ لگیں لیکن بحیثیت مجموعی وہ کتاب اہم ہو،تو آپ بجائے اس کے کہ وہ کتاب رکھ دیں بہتر ہے کہ کچھ صفحات چھوڑ کر آگے چلے جائیں اور کتاب مکمل پڑھیں پھر ان صفحات کو دیکھ لیں۔وہ حصہ آپ کو خود ہی اٹریکٹ کر لے گا۔