اسحاق ڈار اب یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز سے بھی فارغ

سپریم کورٹ نے اسحاق ڈار کو یونورسٹی آف ہیلتھ سائنسز لاہور کے چیئرمین بورڈ آف گورنرز کے عہدے سے ہٹانے اور تین روز میں نئی تعیناتی کرنے کا حکم دیا ہے۔تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے عدالت نے یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز لاہور سے متعلق ازخود نوٹس کی سماعت کی۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ قواعد کے تحت یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز لاہور کے بورڈ آف گورنرز کا اجلاس ہر دو سال بعد ہونا چاہیے لیکن 2016ءسے اب تک کوئی اجلاس نہیں ہوا، بورڈ آف گورنرز کے چیئرمین اسحاق ڈار ملک سے فرار ہیں، عدالت انہیں اشتہاری قرار دے کر ریڈ وارنٹ جاری کر چکی ہے، بورڈ آف گورنرز کے چیئرمین کی عدم موجودگی میں بورڈ غیر فعال ہے۔عدالت نے اسحاق ڈار کو چیئرمین یو ایچ ایس بورڈ آف گورنرز کے عہدے سے ہٹانے اور تین روز میں نئے چیئرمین کی تعیناتی کا حکم دیا ہے جبکہ وزارت خارجہ سمیت دیگر اسٹک ہولڈرز سے جواب طلب کر لیا گیا ہے۔
یاد رہے کہ چھ ستمبر کو چیف جسٹس نے اسحاق ڈار سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دئیے تھے کہ اگر 10 دن میں وطن واپس نہیں آتے توعدالت ان کے خلاف فیصلہ سنا دے گی۔یاد رہے کہ 4 ستمبر2018ءکو الیکشن کمیشن آف پاکستان نے سپریم کورٹ کے حکم پرسابق وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی سینیٹ رکنیت معطل کر دی تھی، جس کے بعد اب اسحاق ڈار سینیٹ کے رکن نہیں رہے۔
 
ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل الیکشن کمیشن نے تصدیق کرتے ہو ئے کہا ہے کہ اسحاق ڈار کی رکنیت سپریم کورٹ کے حکم پر معطل کی گئی جس کے بعد اب وہ سینٹ کے رکن نہیں،اس سے قبل 14جولائی 2018ءکو اٹارنی جنرل نے سپریم کورٹ کو بتایا تھا کہ وزارت داخلہ کی منظوری کے بعد سابق وزیر خزانہ کے وارنٹ جاری کردیئے گئے ہیں۔