ہائیکورٹ: اسکولز کالجز میں منشیات کے استعمال کے خلاف کیس کا فیصلہ محفوظ

لاہور (کرئیر کاروان) لاہور ہائیکورٹ میں سکولز کالجز میں منشیات کے استعمال کے خلاف کیس میں فریقین کے وکلاء کے دلائل مکمل ہونے پر فیصلہ محفوظ ۔ ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس جواد حسن نے جوڈیشل ایکٹوزم پینل کی درخواست پر سماعت کی۔
ایڈووکیٹ اظہر صدیق نے نے موقف اپنایا کہ تعلیمی اداروں میں امنتاعے منشیات ایکٹ 2018ء پر عملدرآمد نہیں ہو رہا، پنجاب کے پاس بل موجود ہے لیکن قوانیں نہیں بنائے جا رہے، منشیات مافیا سکول کالجز میں بچوں کو منشیات استعمال کروا رہا ہے، آنے والی نسلوں کی بقاء کا مسئلہ ہے، پولیس اور ایکسائز ڈیپارٹمنٹ اپنی ذمہ داریاں پوری نہیں کر رہا۔
استدعا ہے کہ عدالت پنجاب حکومت کو منشیات کے استعمال کی روک تھام کے لیے اقدامات کرنے کا حکم دے۔ عدالت نے ریمارکس دیئے کہ یہ اہم مسئلہ ہے، منشیات کے استعمال سے متعدد لوگوں کی اموات ہو چکی ہے، منشیات قوانین میں ترامیم ہونی چاہیے۔ فاضل عدالت نے فریقین کے وکلاء کے دلائل مکمل ہونے پرفیصلہ محفوظ کر لیا ۔