عالمی اردو کانفرنس کے آخری سیشن کی روئیداد

کراچی (اخباررپورٹ)گزشتہ روزعالمی اردو کانفرنس کے چوتھے اور آخری دن کے پہلے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئےممتاز شاعر اور ماہر تعلیم ڈاکٹر پیرزادہ قاسم رضا صدیقی نے کہا ہے کہ موجودہ عہد کے نظام تعلیم پر غور و فکر کی ضرورتٰ ہے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے عالمی اردو کانفرنس کے چوتھے اور آخری دن کے پہلے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا جس کا موضوع ’’معیاری تعلیم، سب کے لئے‘‘ تھا، ڈاکٹر سید جعفر احمد نے نظامت کے فرائض انجام دیئے، دیگر مقررین میں ڈاکٹر قاسم بھگیو، ڈاکٹر اجمل خان، ڈاکٹر انوار احمد، غازی صلاح الدین، پروفیسر ہارون رشید، امینہ سید، صادقہ صلاح الدین اور پروفیسر اعجاز احمد فاروقی شامل تھے،ڈاکٹر پیرزادہ قاسم نے کہا کہ جب بھی حکومتیں بدلتی ہیں تو یہ کہا جاتا ہے کہ ہم قومی امنگوں کے مطابق پالیسی مرتب کریں گے، بعدازاں یہ پالیسیاںشیلف میں رکھ دی جاتی ہیں، پروفیسر ہارون رشید نے کہا کہ پاکستان دنیا کا وہ ملک ہے جہاں تعلیم پر سب سے کم خرچہ کیا جاتا ہے ان حالات میں بھلا کس معیاری تعلیم کی بات کی جاسکتی ہے، غازی صلاح الدین نے کہا کہ اس ملک میں اصل مسئلہ، عدم برداشت کا ہے،اگر اس سےچھٹکارا نہ پایا گیا تو یہ شعبہ آگے نہیں بڑھ سکتا، ڈاکٹر انوار احمد نے کہا کہ تعلیم کا شعبہ اپنی قیادت سے پہچانا جاتا ہے جب نصاب بنانے والی کمیٹیوں میں ایسے لوگ شامل ہوجائیں جو اپنے بڑوں کو خوش کرنے کے لئے خود ان سے پوچھیں کہ حضور! کس طرح کا نصاب چاہتے ہیں تو پھر تعلیم کا اللہ ہی حافظ ہے، ڈاکٹر اجمل خان نے کہا کہ جب فیصلے کا حق اساتذہ سے لے لیا جائے تو یقیناً معیار تعلیم گرے گا،صادقہ صلاح الدین نے کہا کہ سندھ کے اسکولوں میں خواتین اساتذہ کا تصور دور دور نہیں ہے، خواتین کی تعلیم نہایت ضروری ہے، ڈاکٹر قاسم بگھیو نے کہا کہ ہمارے پاس پلاننگ کی کمی ہے، دوسرے اجلاس سے ’’تراجم اور دنیا سے رابطہ‘‘ کے موضوع پر ممتاز دانشور رضا علی عابدی نے اپنے صدارتی خطاب میں کہا کہ ترجمہ، ایک مشکل فن ہے، لیکن بعض تراجم پر اصل تخلیق کا گمان ہوتا ہے، انجم رضوی نے نظامت کی، دیگر مقررین میں عارف نقوی، (جرمنی) خلیل طوقار (ترکی) سعید نقوی (امریکہ) ارشد فاروق (فن لینڈ) وفا یزدان فش (ایران) بشریٰ اقبال (جرمنی) اور دیگر شامل تھے، چھٹے اجلاس میں ملک کے معروف مزاح گو شاعر انور مسعود نے اپنے خوبصورت اور مخصوص انداز میں مزاح سے بھرپور شاعری پیش کرکے تقریب میں موجود سیکڑوں شائقین کے دل جیت لئے،انور مسعود نے اس موقع پر اپنے مختصر خطاب میں کہاکہ شہر میں ادبی اور ثقافتی فضا کو پروان چڑھانے میں صدر آرٹس کونسل کراچی محمد احمد شاہ کو میں خراجِ تحسین پیش کروں گا کہ وہ تسلسل کے ساتھ عالمی اُردو کانفرنس منعقد کررہے ہیں، مجھے اُمید ہے یہ سلسلہ تسلسل کے ساتھ جاری رہے گا۔