کورونا کے باعث سیکنڈری سکول ایجوکیٹرز کا دھرنا ملتوی

سیکنڈری سکول ایجوکیٹرز (SSE's) ریگولرائزیشن موومنٹ پنجاب کی کور کمیٹی کے ممبران سید قاسم بخاری میاں شہزاد منور ، خضر حیات وٹو، ذیشان اُپل، محمد عمران، عدنان مصطفی اور غلام فرید  نے ٹیلیفونک مشاورت کے بعد کرونا وبائی مرض کے باعث ملکی حالات کے پیش نظر متفقہ طور پر پنجاب بھر کے 11 ہزار سے زائد سیکنڈری سکول ایجوکیٹرز کی مستقلی کے لئے 2اپریل کو پنجاب اسمبلی کے سامنے دیا جائے والا احتجاجی دھرنا ملتوی کرنے کا فیصلہ کیا اور کہا ہے کہ آزمائش کی اس گھڑی میںہم سمیت پور ی اساتذہ برادری حکومت اور کرونا جیسی وبائی مرض سے متاثرہ خاندانوں کے ساتھ شانہ بشانہ کھڑی ہے اور ہر قسم کی قربانی دینے کو بھی تیار ہیں۔تمام ممبران نے فیصلہ کیا کہ ملکی حالات بہتر ہونے پر باہمی مشاورت سے آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا جبکہ پنجاب بھر کے سیکنڈری سکول ایجوکیٹرز اپنی پنجاب پبلک سروس کمیشن کے بغیر مستقلی کے لئے رابطہ مہم اور جدوجہد جاری رکھیں گے اور جن اضلاع میں سیکنڈری سکول ایجوکیٹرز کے کنٹریکٹ میں توسیع ابھی تک نہیں ہوئی اسکے لئے متعلقہ ڈسٹرکٹ ایجوکیشن اتھارٹیز سے رابطہ کرکے کنٹریکٹ میں توسیع کروائی جائے گی تاکہ کنٹریکٹ اساتذہ کی تنخواہیں بند نا ہوں۔ کور کمیٹی ممبران نے صوبائی وزیر تعلیم ڈاکٹر مراد راس اور سیکرٹری سکولز پنجاب سے مطالبہ کیا ہے کہ پنجاب بھر کے 11ہزار سے زائد سیکنڈری سکول ایجوکیٹرز گزشتہ کئی سالوں سے اپنی ریگولرائزیشن کے منتظر ہیں لہذا حسب وعدہ تمام سیکنڈری سکول ایجوکیٹرز اور اسسٹنٹ ایجوکیشن آفیسرز کو غیر مشروط ریگولر کیا جائے۔