غیرملکی صحافی سنتھیارچی کا رحمان ملک پر جنسی زیادتی کا الزام

 

اسلام آباد(نیوزڈیسک)غیرملکی صحافی سنتھیارچی نے پیپلزپارٹی رہنماؤں پرسنگین الزامات عائد کیے ہیں جس کی وجہ سے سوشل میڈیاپر ایک طوفان برپاہوگیاہے۔اطلاعات کے مطابق سنتھیارچی کاکہناہے کہ اسے ۱۱۰۲ء میں اس وقت کے وزیرداخلہ رحمان ملک نے جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا۔سنتھیارچی نے دیگرارکان اسمبلی پر بھی الزامات کی بوچھاڑ کردی ہے اس کا کہناہے کہ سابق وزیراعظم یوسف رضاگیلانی نے اس کے ساتھ ایوان صدرمیں دست درازی کی جبکہ مخدوم شہاب الدین نے بھی بدسلوکی کی۔تفصیلات کے مطابق غیرملکی صحافی سنتھیارچی کی جانب سے سوشل میڈیاپر جاری ایک پیغام میں پیپلزپارٹی کے رہنماؤں پرجنسی زیادتی اور ہراسگی کے الزامات عائد کیے گئے ہیں۔سنتھیارچی نے تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ واقعہ منسٹرانکلیو میں رحمان ملک کی رہائش گاہ پرپیش آیاتھا۔مجھے ملاقات کے لیے بلایاگیا تھا۔میراخیال تھا کہ یہ ملاقات میرے ویزے کے متعلق ہوگی لیکن مجھے پھول دیئے گئے  اور میرے مشروب میں نشہ آورچیزملاکر مجھے جنسی زیادتی کا نشانہ بنایاگیا۔اس حوالے سے انہوں نے امریکی سفارت خانے سے بھی رابطہ کیا لیکن چونکہ اس وقت امریکہ اور پاکستان کے تعلقات حساس نوعیت اختیارکیے ہوئے تھے اس لیے کسی نے ان کی شکائت  پر کوئی ایکشن نہیں لیا۔انہوں نے بتایاکہ میں نے اپنی خاموشی اپنے منگیتر کے کہنیپرتوڑی ہے نیز ان پراوران کے اہل خانہ پر پیپلزپارٹی کی جانب سے سنگین الزامات بھی عائد کیے جارہے ہیں۔انہوں نے بلاول بھٹوزرداری سے کہاہے کہ وہ اپنے لوگوں کو ان کے کردارپر ذاتی حملے کرنے سے روکیں۔اطلاعات کے مطابق سنتھارچی نے کہاہے کہ اس سارے مسئلے کی وجہ سے وہ بہت ذہنی دباؤکاشکارہیں اس لیے وہ کچھ وقت تنہائی میں گزارنا چاہتی ہیں لیکن اگر کوئی تحقیقات کے لئے انہیں طلب کرے تو وہ اگلے ہفتے حاضرہونے کے لیے تیارہیں۔